آزاد کشمیر ہائیکورٹ نے قائد ایوان کا انتخاب پیر تک روک دیا

آزاکشمیر کی عدالت نے اسپیکراسمبلی کی کارروائی کو کالعدم قرار دیتے ہوئے قائد ایوان کے انتخاب کو روک دیا۔

تفصیلات کے مطابق آزاد کشمیرہائی کورٹ نے مختصر فیصلہ سناتے ہوئے قائد ایوان کے انتخاب پرحکم امتناع جاری کردیا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ آزادکشمیرہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف پی ٹی آئی نے سپریم کورٹ جانے کا فیصلہ کیا ہے۔

اپوزیشن کی جانب سے دائررٹ پر ہائی کورٹ کے 2 رکنی بینچ نے فیصلہ سنایا۔

قبل ازیں وزیراعظم کے انتخاب کے لیے شیڈول جاری کردیا گیا تھا جس میں کہا گیا کہ وزارت عظمیٰ کے امیدوارپونے 3 بجے تک کاغذات نامزدگی جمع کروائیں جبکہ وزیراعظم کے انتخاب کے لیے ساڑھے 4 بجے کا وقت دیا گیا۔

پی ٹی آئی کے تنویرالیاس کی جانب سے کاغذات جمع کروائے گئے جبکہ متحدہ اپوزیشن کی جانب سے ابھی تک کاغذات نامزدگی جمع نہیں کروائے گئے۔

آزاد کشمیرکے وزیراعظم سردارعبدالقیوم نیازی کے خلاف اسمبلی میں تحریک عدم اعتماد جمع ہے جس پرووٹنگ کے لیے آج اجلاس بلایا گیا تھا۔گزشتہ روزآزاد کشمیر کے وزیراعظم نے استعفیٰ دیا تھا۔

 سردارعبدالقیوم نیازی کا کہنا تھا کہ حالات و واقعات کا کچھ پتہ نہیں ہوتا، تحریک آزادی کشمیر کے بیس کیمپ کا وزیراعظم تھا، عمران خان نے میرا انتخاب کیا میں ان کامشکور ہوں کہ اہم عہدے پرفائزکیا۔

ان کا کہنا تھا کہ میرے متعلق لکھنے والےکی ٹانگیں کانپ رہی تھیں، مجھ پربغیرالزام عدم اعتماد لائی گئی اورمجھ پرچارج شیٹ جو لگائی گئی وہ بے بنیاد ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں